menu icon

مسلم لیگ ن کے تحت کسی بھی تحقیقات کی آزادی پر یقین نہیں، سلمان اقبال

سلمان اقبال نے کہا کہ وہ مسلم لیگ ن کی حکومت میں کسی بھی تحقیقات کی آزادی پر یقین نہیں رکھتے
web desk dharti ویب ڈیسک


اے آر وائی نیوز کے چیف ایگزیکٹیو آفیسر (سی ای او) سلمان اقبال نے کہا کہ موجودہ حکومت کی جانب سے ان کے خلاف چلائی جانے والی گندی مہم کی وجہ سے وہ گزشتہ چھ ماہ سے پاکستان واپس نہیں آ سکے۔

تاہم انہوں نے کہا کہ معروف تفتیشی صحافی ارشد شریف کے قتل کی تحقیقات میں تعاون کریں گے اگر ان سے سوالات کیے جائیں گے۔انہوں نے یہ بھی کہا کہ وہ موجودہ پی ایم ایل این حکومت کی جانب سے کی جانے والی تحقیقات کی آزادی پر یقین نہیں رکھتے۔

سوشل میڈیا پر جاری ایک بیان میں سلمان اقبال نے کہا کہ وہ ارشد شریف کے قتل کی تحقیقات کرنے والے کسی بھی ’آزاد‘ کمیشن پر اعتماد نہیں کرتے۔ تاہم، انہوں نے کہا کہ وہ اس سلسلے میں ان سے جو بھی سوال پوچھے گئے ہیں ان کے جوابات دینے کے لیے تیار ہیں۔

انہوں نے کہا، “میں موجودہ پی ایم ایل این حکومت کی طرف سے کی جانے والی تحقیقات کی آزادی پر یقین نہیں رکھتا، لیکن میں مجھ سے پوچھے گئے کسی بھی سوال کا جواب دوں گا۔”

سلمان اقبال نے اقوام متحدہ کے پینل سے تحقیقات کا مطالبہ کیا۔ “میں اقوام متحدہ کے انسانی حقوق کے دفتر کے زیر نگرانی ایک آزادانہ تحقیقات کا مطالبہ کر رہا ہوں، اور میں یقیناً اس طرح کی کسی بھی تحقیقات میں اپنا مکمل تعاون فراہم کروں گا جس میں ارشد شریف کے قتل کے پیچھے مکمل سچائی حاصل کرنے کی کوشش کی جائے تاکہ ذمہ داروں کو کیفرکردار تک پہنچایا جا سکے۔ انصاف، “انہوں نے بیان میں کہا۔

اے آر وائی باس نے کہا کہ ارشد کی جان کو لاحق خطرات جائز ہیں اور انہوں نے حکومتی تحفظ کا مطالبہ کیا۔ انہوں نے کہا کہ مدد حاصل کرنے کے بجائے، اسے بغاوت کے مقدمات، متعدد ایف آئی آر اور گرفتاری کے وارنٹ کے ساتھ نشانہ بنایا گیا۔ انہوں نے کہا کہ ان حالات میں صحافی کو پاکستان چھوڑنے کا مشکل انتخاب کرنا پڑا۔

انہوں نے کہا کہ حکومت اپریل 2022 میں اقتدار میں آنے کے بعد سے ان کے خلاف گندی مہم چلا رہی ہے۔ انہوں نے کہا کہ مسلم لیگ (ن) کی رہنما مریم نواز نے ان کے خلاف مہم کا آغاز کیا کیونکہ “ایف بی آر، ایف آئی اے، پیمرا اور ایس ای سی پی کو سیاسی طور پر حملہ کرنے کے لیے ہتھیار بنایا گیا ہے۔ “وہ.

سلمان اقبال نے کہا کہ ان پر غیر ضروری حملوں اور پی ایم ایل این حکومت کی طرف سے صحافیوں پر ظلم و ستم نے انہیں اپنی حفاظت کے حوالے سے خوف میں مبتلا کر دیا ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ وہ گزشتہ چھ ماہ سے پاکستان واپس نہیں آ سکے

انہوں نے کہا کہ حال ہی میں ارشد کے قتل کے حوالے سے وزیر داخلہ کی طرف سے مجھ پر لگائے گئے بے بنیاد اور بے بنیاد الزامات اسی مہم کا تسلسل ہیں

انہوں نے کہا کہ میں واضح طور پر کہتا ہوں کہ میں اپنے بھائی کے خلاف ہونے والے بہیمانہ فعل میں کسی بھی طرح کا ملوث نہیں تھا۔

ARY NEWS SALAMAN IQBAL

متعلقہ خبریں









مزید

کھیل

پنڈی ٹیسٹ کا دوسرا روز،انگلش ٹیم پہلی اننگز میں کتنے رنز بنائے.؟











تجارت

گوگل پلے اسٹور کی سروسز پاکستان میں بند ہونگی یا نہیں ؟ فیصلہ ہوگیا











دلچسپ

” میرا دل یہ پُکارے آجا ” مسٹربین بھی اسی بُخار میں مبتلا












وڈیوز

وڈیوز

افواجِ پاکستان کی قربانیوں پر قوم کے جذبات

وڈیوز

غربت اور بیماری میں بچوں کی پرورش کرتی باہمت خاتون

وڈیوز

ابھی نندن پرکلی کی مزاحیہ نظم


لاہور میں باپ کی بیٹی سے نکاح کی خواہش

فارن فنڈنگ کیس : خان صاحب انصاف کے لیے عوام میں نکل آئے

جشن آزادی پر محرم الحرام کے احترام میں کاروبار میں مندی کا رجحان

چیل گوشت کا صدقہ دینا حلال ہے یا حرام ؟

بجلی کے بل دیکھ کر عوام کی چیخیں نکل گئیں

محبت کی شادی کا خوفناک انجام


مزید دیکھیں