menu icon

کابل دھماکے میں 19 نوجوان ہلاک اور 27 زخمی ہو گئے۔

ڈیلی دھرتی (ویب ڈیسک)افغان دارالحکومت کابل میں تعلیمی ادارے پر خودکش حملے میں کم از کم 19 افراد ہلاک اور متعدد زخمی ہو گئے۔ تعلیمی مرکز شہر کے مغرب میں
web desk dharti ویب ڈیسک


ڈیلی دھرتی (ویب ڈیسک)افغان دارالحکومت کابل میں تعلیمی ادارے پر خودکش حملے میں کم از کم 19 افراد ہلاک اور متعدد زخمی ہو گئے۔

تعلیمی مرکز شہر کے مغرب میں دشت برچی کے محلے میں واقع ہے۔

سرکاری حکام کے مطابق، طلباء یونیورسٹی کے امتحان کے لیے پریکٹس امتحان دے رہے تھے۔ متاثرین میں زیادہ تر خواتین ہیں۔

بہت سے مقامی باشندوں کا تعلق ہزارہ نسل سے ہے، جو پہلے بھی حملوں کا نشانہ بنتے رہے ہیں۔

مقامی ٹیلی ویژن اور سوشل میڈیا پوسٹس کے مطابق، ڈھکی ہوئی لاشوں کی قطاریں فرش پر پھیلی ہوئی تھیں جو کہ قریبی ہسپتال کے مناظر تھے۔ نجی کالج کے مقام سے دیگر میڈیا کے مطابق تباہ شدہ کلاس رومز ملبے سے بھرے ہوئے تھے اور اُلٹی میزیں تھیں۔

ہسپتالوں میں سے ایک میں اپنی بہن کو ڈھونڈنے والی ایک خاتون نے نیوز ایجنسی کو بتایا، ’’ہمیں وہ یہاں نہیں ملی۔ وہ ایک 19 سالہ خاتون تھیں۔

عینی شاہدین کے بیانات کے مطابق متاثرین کی اکثریت خواتین کی تھی۔ ایک زخمی طالب علم نے نیوز کو بتایا کہ جب حملہ ہوا تو کمرے میں تقریباً 600 افراد موجود تھے۔

کاج ٹیوشن سنٹر کے نام سے مشہور نجی ادارے میں مرد اور خواتین طلباء کو پڑھایا جاتا ہے۔ گزشتہ سال اگست میں طالبان کے دوبارہ اقتدار میں آنے کے بعد سے، ملک میں لڑکیوں کے زیادہ تر اسکول بند ہوچکے ہیں، حالانکہ کچھ نجی اسکول اب بھی کام کر رہے ہیں۔

اس دھماکے میں، جس میں طالبان کے ترجمان کابل پولیس نے 27 کے زخمی ہونے کی اطلاع دی تھی، تاحال اس کی اطلاع نہیں ہے۔

لیکن طالبان اور پرتشدد اسلامک اسٹیٹ گروپ (آئی ایس)، جو دونوں ہی سنی اسلام پسند تنظیمیں ہیں، نے ہزارہ برادری کو طویل عرصے سے ستایا ہے، جن میں اکثریت شیعہ مسلمانوں کی ہے۔

ہزارہ افغانستان کا تیسرا سب سے بڑا نسلی گروہ ہے۔ طالبان کی وزارت داخلہ کے ترجمان نے جمعہ کو سیکیورٹی دستوں کے جائے وقوعہ پر موجود ہونے کی تصدیق کی اور حملے کی مذمت کی۔ شہری اہداف پر حملہ کرنا “دشمن کی وحشیانہ بدحالی اور اخلاقی معیارات کی کمی کو ثابت کرتا ہے”۔ عبدالنافی ٹکور کو۔

امریکا نے بھی اس واقعے کی شدید مذمت کی ہے۔

افغانستان میں امریکی مشن کے چارج ڈی افیئرز کیرن ڈیکر نے ٹویٹ کیا، “امتحان دینے والے طلباء سے بھرے کمرے کو نشانہ بنانا مکروہ ہے۔ تمام طلباء کو امن اور خوف کے بغیر تعلیم حاصل کرنے کے لیے آزاد ہونا چاہیے۔”

طالبان کے قبضے کے بعد لڑائی ختم ہونے کے بعد افغانستان میں سیکیورٹی کی صورتحال بہتر ہونا شروع ہوگئی تھی۔ تاہم، حالیہ مہینوں میں، مساجد، طالبان کے حامیوں اور دیگر اہداف کے خلاف حملوں میں اضافہ ہوا ہے، جن کی ذمہ داری آئی ایس نے قبول کی ہے۔ طالبان کی تنظیم کے ساتھ شدید دشمنی ہے۔ متعدد حملوں نے دشت برچی کے محلے کو نشانہ بنایا، جن میں سے کچھ اسکولوں اور اسپتالوں کو نشانہ بنایا۔

پچھلے سال دشت برچی میں لڑکیوں کے ایک اسکول پر بم حملے میں، طالبان کے دوبارہ کنٹرول حاصل کرنے سے عین قبل، کم از کم 85 افراد ہلاک ہوئے، جن میں زیادہ تر طالبات تھیں، اور سینکڑوں زخمی ہوئے۔

متعلقہ خبریں









مزید

کھیل

پنڈی ٹیسٹ کا دوسرا روز،انگلش ٹیم پہلی اننگز میں کتنے رنز بنائے.؟











تجارت

گوگل پلے اسٹور کی سروسز پاکستان میں بند ہونگی یا نہیں ؟ فیصلہ ہوگیا











دلچسپ

” میرا دل یہ پُکارے آجا ” مسٹربین بھی اسی بُخار میں مبتلا












وڈیوز

وڈیوز

افواجِ پاکستان کی قربانیوں پر قوم کے جذبات

وڈیوز

غربت اور بیماری میں بچوں کی پرورش کرتی باہمت خاتون

وڈیوز

ابھی نندن پرکلی کی مزاحیہ نظم


لاہور میں باپ کی بیٹی سے نکاح کی خواہش

فارن فنڈنگ کیس : خان صاحب انصاف کے لیے عوام میں نکل آئے

جشن آزادی پر محرم الحرام کے احترام میں کاروبار میں مندی کا رجحان

چیل گوشت کا صدقہ دینا حلال ہے یا حرام ؟

بجلی کے بل دیکھ کر عوام کی چیخیں نکل گئیں

محبت کی شادی کا خوفناک انجام


مزید دیکھیں